‏نئے مالی سال 2024-25 کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا‏یورپی سیّاح ، پیدل سفر کر کے شمالی علاقوں میں پہنچ گئےبند صندوقRegressive Mindsetبیوپار یا لاحاصل بحث : جان کر جیوذھانت، طاقت اور ریاستمارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ کیوں لگتی ہے؟بھارتی بزنس میں کی اھلیہ کے لئے پینے کا صاف پانی فرانس اورفجی کے قدرتی چشموں آئیس لینڈ کے گلیئشئر کو ملا کر تیار کیا جاتا ہے- سات سو پچاس ملی گرام پانی کی بوتل کی قیمت بھارتی روپے میں انچاس لاکھ روپے ھے-‎آئی سی سی ٹی20 ورلڈکپ میں بیس ٹیمیں حصہ لیں گی- افتتاحی تقریب آج نیویارک میں ہوگی – پاکستان اور بھارت کا میچ ۹ جون کو ہو گا-پہلا میچ آج امریکا اور کینیڈا کی ٹیموں کے درمیان کھیلا جائے گا-‏ملالہ یوسف زئی کی برطانوی ویب سیریزامریکی عدالت نے سابق صدر ٹرمپ کو مجرم قرار دے دیا- سزا گیارہ جولائی کو سنائی جائے گیعمران خان آفیشل ایکس ہینڈل سے شیخ مجیب الرحمان کی پروپیگنڈا ویڈیو اپ لوڈ کرنے پر ایف آئی اے سائبر وِنگ کا انکوائری کا فیصلہ, ذرائع۱۹۷۱ کی کہانی : ایک تحقیقی مکالہ‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںفوج‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںسینٹکام کے کمانڈر جنرل مائیکل ایرک کوریلا کا جی ایچ کیو کا دورہ، آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر سے ملاقات، باھمی دلچسپی کے امور بالخصوص علاقائی سلامتی کے معاملات میں تعاون پر تبادلہ خیالLeadership Dilemmaنیشنل ڈیفنس یونیورسٹی اسلام آباد میں پاک برطانیہ علاقائی استحکام کے موضوع پر چھٹی (6)کانفرنس منعقد ہوئیچین کے بڑے شہر اپنے ہی وزن سے دب رھے ہیںTransformation of Political Conflictوفاقی کابینہ نے نجی یونیورسٹیوں اور دیگر تمام اداروں کیلئے لفظ نیشنل استعمال کرنے پر پابندی عائد کردی

پاکستان میں ہر سال 10 لاکھ مکانات کی ضرورت ہے


پاکستان میں جائیداد کے کاروبار سے منسلک ماھرین کا کہنا ہے کہ کہ پاکستان میں جائیداد کی خریدوفروخت کا کاروبار کامیاب اور محفوظ ترین سرمایہ کاری ہے۔
ایک سیمینار میں بات کرتے ھوئے ارشد علی ، ریئل اسٹیٹ ماھر کا کہنا ھے کہ ’اگر پاکستان کا دوسرے ملکوں سے موازنہ کریں تو ایہاں ریئل سٹیٹ ابھی بھی سسستی ہے۔ان کے مطابق: ’اگر آپ انڈیا میں چلے جائیں اور ان کے شہروں کے اندر جا کر دیکھیں گے خاص طور پر شہری علاقوں میں تو وہاں آپ کو ریئل سٹیٹ چار گنا مہنگی نظر آئے گی۔ اسی طرح اگر آپ مغرب کی طرف جائیں تو سب کو آئیڈیا ہے کہ ریئل سٹیٹ کتنی مہنگی ہے۔‘
ان کا کہنا ہے کہ ’پاکستان میں مکانات کے مقابلے میں پلاٹس کی مانگ زیادہ ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ پلاٹ میں لوگ زیادہ انویسٹ کرتے ہیں اور محفوظ محسوس کرتے ہیں۔ اور وہ یہ سرمایہ بعد میں بچے کی شادی کرنی ہو یا تعلیم کے لیے باہر بھیجنا ہو اسے استعمال کرتے ہیں۔‘
ماھرین کی متفقہ رائے ھے کہ ’ریئل سٹیٹ بہت ساری انڈسٹریز کا مجموعہ ہے اور اس کے ساتھ 100 سے زیادہ انڈسٹریز منسلک ہیں لہذا ریئل اسٹیٹ ایک ڈرائیور ہے۔ ایک انجن کی طرح ہے انجن چلے گا تو گاڑی چلے گی-
ان کا کہنا ھے کہ کسی بھی ملک کی معیشیت میں رئیل اسٹیٹ اس کی ریڑھ کی ہڈی ہے لہذا آپ اس کو نقصان سے وابستہ کر ہی نہیں سکتے۔
پاکستان میں رہائشی مکانات کی کمی آج بھی موجود ہے۔ ایک اندازے کے مطابق ہر سال 10 لاکھ سے زائد مکانات کی مانگ ہے۔ آج سے دو سال پہلے یہ نو لاکھ تھی پھر 10 پر گئی اور اب 11.4 لاکھ پر آچکی ہے۔