پاکستان میں ہر سال 10 لاکھ مکانات کی ضرورت ہےایران نے اسرائیل پر ڈرون اور میزائیلوُں سے حملہ کر دیا ہےگوجرانوالہ- سیالکوٹ- وزیر آباد- گجرات اور لالہ موسی، بنا بنا اکنامک زونسیاچن کے محاز پر پاکستان کی فوجپاکستان کے شمالی علاقہ جاتمعاشرے کی سوچ کو بدلنا ریاست کو ماڈرن بنانے سے کہیں زیادہ ضروری ہےمعاشرےمعاشرے کی سوچ کو بدلنا ریاست کو ماڈرن بنانے سے کہیں زیادہ ضروری ہےاگر ہمّت ہو تو معزوری کوئی رکاوٹ نہیں ہوتیمیلہ 6 ستمبروہ لمحہ جب 7.4 شدت کے زلزلے نے تائیوان کو ہلا ڈالامہنگائی کی شرح ۲۰% پر آ گئی-اپنی صحت کا خیال رکھیں- سوشل میڈیا سے دور رہیںصدر ارگان کی پارٹی کو ترکی میں بلدیاتی انتخابات میں شکستافغان سرزمین دہشتگردوں کی محفوظ آماجگاہ ہے ؛ فنانشل ٹائمچولستان میں زمینوں کو آباد کرنے کا منصوبہسائنوٹیک سولر پرائیویٹ لمیٹڈ کی پاکستان میں سرمایہ کاریپیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 9 روپے 66 پیسے کا اضافہ –مائع پیٹرولیم گیس( ایل پی جی) کی فی کلو قیمت میں 6 روپے 45 پیسے کمی کردی گئیبھارت میں پانی کی شدید قلّت؛ موسم گرما میں حالات مزید خراب ھونگےغزہ میں پھنسے دس لاکھ سے زائد لوگ سمندر کا نمکین پانی پینے پر مجبورغزہغزہ میں پھنسے دس لاکھ سے زائد لوگ سمندر کا نمکین پانی پینے پر مجبورامریکی کی ایران کے بیلسٹک میزائل، جوہری اور دفاعی پروگراموں کو سپورٹ کرنے والے پروکیورمنٹ نیٹ ورکس پر نئی پابندیاں عائد کر دی

نئ ریساں شہر لاھور دیاں

لاھور کے دن پھرنے والے ہیں- لاھور کے دن ہر تین چار سال بعد پھرتے ہیں اور گھوم پھر کر واپس چلے جاتے ہیں -پچھلے, دونوں منتخب وزیر اعظم لاھور کے تھے – اگلابھی امید ھے لاھور سے ہی ھو گا-وزیر اعظم لاھور سے ھوتو بھکاریوں کا ضرور فائدہ ہوتا ھے کہ ویک اینڈ پر وزیر اعظم جب لاھور تشریف لاتے ہیں تو پروٹوکال کی وجہ سے ٹریفک جام ہو جاتا ھے اور بھیک مانگنے میں آسانی رھتی ہے-
برمنگھم میں پاکستانی کمیونٹی کی ایک پارٹی میں کچھ گورے دوست بھی مدوع تھے- ایک پاکستانی دوست ساجد خوب گپیں ہانک رھا تھا- الفریڈ نامی گورے کو بندہ دلچسپ لگا- ساجد سے گپ شپ میں اپنائیت سے پوچھا آپ پاکستان کے کس حصے سے ہیں- ساجد نے کہا ” لاھور”- الفریڈ نے جواب سن کر فورا کہا "اوہ” جہاں ہر مریض کو مرنے سے پہلے لاتے ہیں- same city where every serious patient is brought before death
ساجد ہکا بکا ، الفریڈ کو دیکھتا رھا-
یہ سچ ہے کہ پنجاب میں تمام سیریس مریضوں کو لاھور ہی لے کر آتے تھے -اس سے یہ بھی اندازہ ھوتا ھے پنجاب نے صحت کے شعبے میں کتنی ترقی ہے – یعنی پورے صوبے میں کہیں بھی کوئی مناسب ھسپتال نہیں سوائے لاھور کے- اگر مرض مقامی ڈاکٹروں کی سمجھ میں نہ آ رھا ھو تو وہ لواحقین کو کہتے تھے ” اینوں لاھور لے جاؤ” – یہ سنتے ہی گھر والے دھاڑیں مارنا شروع کر دیتے تھے- پورے پنجاب کے ڈاکٹر لاھور کو میڈیکل سائنس کا گڑھ سمجھتے ہیں – اور کچھ مریض یہاں سے شفا یاب ہو کر گئے بھی ہیں –
‏ لاھور پورے پنجاب کا سانجھا شہر ہے- لاھور آنے والی سواریوں کو بادامی باغ پہنچتے ہی دل کو قرار سا مل جاتا ہے – لاھور وہ شہر ہے جس کا چسکا، نشہ بن کے رگوں میں اتر جاتا ھے- اگر کوئی لاھوریا پیدا بھی ادھر ہی ہوا ہے، پڑھائی بھی ادھر کی ھے، اس کا سسرال بھی ادھر ہی ہے ، آپ اسے اٹھا کر سان فرانسیسکو بھی لے جائیں وہ چند دنوں بعد واپس بھاگ آئے گا- اپنے سے بڑوں کو احتراما ” پائن” کہتے ہیں- اور عمر میں چھوٹے کو ” چھوٹا” ہی کہتے ہیں صرف ساتھ ” اوئے” لگا لیتے ہیں – ” اوئے” کو بڑی جگہوں پر استعمال کیا جاتا ہے ” کی آ اوئے”،” اوئے پچھے ھٹ” – لاھور میں رنگ روڈ، اورنج ٹرین اور میٹرو بس کےاضافے نے شہر کو نئی زندگی بخشی ہے- اندرون لاھور جوں کا توں سے – چھولے مرغ اور لسی پر چل رھا ھے-
الحمرا حال ادھر ہی ھے- نرگس کے اسٹیج ڈرامہ کو الوداع کہنے سے، لاھور میں ادبی سرگرمیاںکافی اضافہ ہوا ھے- ببو برال، مستانہ،شوکی خان اب نہیں رھے- ان کی جگہ ناصر چنیوٹی اور امانت چن نے لے لی ھے-
انار کلی، لبرٹی، داتا صاحب، لکشمی، مزنگ، بھاٹی ، گلبرگ میں سے فیصلہ کرنا مشکل ہے مٹن کڑاھی کدھر سے اچھی ملتی ہے- چمن آئسکریم کا ابھی تک کوئی مقابل نہیں – کسی دور میں پھجے کے پائے مشہور تھے، لیکن وہ اب ہر جگہ مل جلتے ہیں – پائے کی بہت سی دوکانیں اب شہر کے مختلف علاقوں میں کھل گئی ھوئی ہیں- لاھور میں پائے کھاتے ھوئے شوربہ منہ سے گرنا اس بات کی علامت ہے کہ پائے اچھے بنے ہیں – بلکہ شوربہ منہ سے نہ گرے تو ویٹر پوچھنے آ جاتا ہے کہ ” پائن پائے چنگے نئی بنے”- لاھوریے ناشتہ عبادت سمجھ کر کرتے ہیں – لسی، پائے اور چھولے لاھوریوں کے دل کے قریب ہیں- لنچ کو مجبوری سمجھ کر کھاتے ہیں اور رات کی روٹی سے عشق ہے لاھوریوں کو- پولٹری کے بزنس کی کامیابی میں لاھور میں بننے والی چکن کڑاھی کا بہت ہاتھ ہے- پتنگ بازی اور الیکشن لاھوریوں کے لئے شغل ہے- لاھوریے مسلم لیگی ہیں -الیکشن کو تہوار سمجھ کر مناتے ہیں – اگر اپنا امیدوار جیت جائے تو خوش ھوتے ہیں لیکن اگر ہار جائے تو بہت زیادہ خوش ھوتے ہیں کہ "چلو ایدھا شغل لاواں گے”- گالیاں شوق اور پیار سے دیتے ہیں اور کھاتے بھی ہیں – بلکہ کوئی دوست آدھا گھنٹہ تک گالی نہ دے تو اس سے استفسار کرتے ہیں کہ ” کی ھویا تینو”- وہ آگے سے بڑا سا پھکڑ تولے تو تب کہیں جا کے تسلی ھوتی ھے کہ بندہ ٹھیک اے-لاھوریوں کے کھانے پینے کو عادات کو دیکھ کر ہی یو این نے فوڈ سیکورٹی کے لئے الرٹ جاری کیا ہے اور ورلڈ ھیلتھ پروگرام نے دل کے امراض کے مزید ھسپتال بنانے کی تجویز دی ھے- پنجاب کا وزیر اعلی لاھور سے نہ ھو تو وہ وزیر اعلی پنجاب لگتا ہی نہیں – عثمان بزدار کو آخر تک وزیر اعلی تسلیم نہیں کیا – "لاھور کی سب سے میٹھی گالی
‏” ڈھکن "ھے – عمومی طور پر یہ عزت افزائی کسی ایسے دوست کے حصے میں آتی ھے جو معصوم حرکتیں کرنے میں مہارت رکھتا ھو ہو- لاھور کے بارے میں مکمل چھا بین مشکل ہے- لیکن یہ ضرور ھے کہ نئ ریساں شہر لاھور دیاں
‏۰-۰-۰-۰-
ڈاکٹر عتیق الرحمان

You might also like