پاکستان میں ہر سال 10 لاکھ مکانات کی ضرورت ہےایران نے اسرائیل پر ڈرون اور میزائیلوُں سے حملہ کر دیا ہےگوجرانوالہ- سیالکوٹ- وزیر آباد- گجرات اور لالہ موسی، بنا بنا اکنامک زونسیاچن کے محاز پر پاکستان کی فوجپاکستان کے شمالی علاقہ جاتمعاشرے کی سوچ کو بدلنا ریاست کو ماڈرن بنانے سے کہیں زیادہ ضروری ہےمعاشرےمعاشرے کی سوچ کو بدلنا ریاست کو ماڈرن بنانے سے کہیں زیادہ ضروری ہےاگر ہمّت ہو تو معزوری کوئی رکاوٹ نہیں ہوتیمیلہ 6 ستمبروہ لمحہ جب 7.4 شدت کے زلزلے نے تائیوان کو ہلا ڈالامہنگائی کی شرح ۲۰% پر آ گئی-اپنی صحت کا خیال رکھیں- سوشل میڈیا سے دور رہیںصدر ارگان کی پارٹی کو ترکی میں بلدیاتی انتخابات میں شکستافغان سرزمین دہشتگردوں کی محفوظ آماجگاہ ہے ؛ فنانشل ٹائمچولستان میں زمینوں کو آباد کرنے کا منصوبہسائنوٹیک سولر پرائیویٹ لمیٹڈ کی پاکستان میں سرمایہ کاریپیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 9 روپے 66 پیسے کا اضافہ –مائع پیٹرولیم گیس( ایل پی جی) کی فی کلو قیمت میں 6 روپے 45 پیسے کمی کردی گئیبھارت میں پانی کی شدید قلّت؛ موسم گرما میں حالات مزید خراب ھونگےغزہ میں پھنسے دس لاکھ سے زائد لوگ سمندر کا نمکین پانی پینے پر مجبورغزہغزہ میں پھنسے دس لاکھ سے زائد لوگ سمندر کا نمکین پانی پینے پر مجبورامریکی کی ایران کے بیلسٹک میزائل، جوہری اور دفاعی پروگراموں کو سپورٹ کرنے والے پروکیورمنٹ نیٹ ورکس پر نئی پابندیاں عائد کر دی

ہندوستان- ایران کے بڑھتے تعلقات

ایک تجزیہ
صرف دو دن پہلے ہندوستان کے وزیر خارجہ جئے شنکر نے ایران کا دورہ کیا اور باضابطہ طور پر کہا کہ علاقائی رابطے ہندوستان ایران تعلقات کا ایک اہم ستون رہا ہے، اور قدرتی طور پر آج کی بات چیت کے ایجنڈے میں نمایاں تھا۔ وسطی ایشیا، افغانستان اور یوریشیا کی منڈیوں تک رسائی کے لیے جغرافیائی پوزیشن۔ ہم نے بین الاقوامی نارتھ ساؤتھ ٹرانسپورٹ کوریڈور کو متحرک کرنے کے امکانات پر تبادلہ خیال کیا۔
پاکستان کو یہ بات ذہن میں رکھنے کی ضرورت ہے کہ ایران بھارت کے توسیعی منصوبے کا حصہ ہے- بھارت کا مقصد اس علاقے میں ایک علاقائی طاقت کے طور پر ابھرنا ہے جو مغرب میں آبنائے ہرمز سے شمال میں وسطی ایشیا تک پھیلا ہوا ہے۔
مشرق وسطیٰ میں ایران کی پالیسیوں کو تسلط پسند سمجھا جاتا ہے جو کہ خطے میں امریکی مفادات سے ٹکراتی ہیں۔ امریکہ نے ایران کو کالعدم تنظیموں حزب اللہ، حماس اور حوثیوں کی پشت پناھی کرنے والا ملک قرار دیا ہے-
ہندوستان اور ایران دونوں متفق ہیں کہ دنیا میں ایک سے زیادہ سپر پاور ھونی چاھیئں ۔ بھارت سٹریٹجک خود مختاری کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ افغانستان اور وسطی ایشیا میں اپنے اثر و رسوخ کو مستحکم کرنا اس کے لیے اہم ہے، اور ایران اس کوشش میں کلیدی کردار ادا کر رھا ھے ۔ خلیج فارس کا کنٹرول کھونے سے ہندوستان کی سلامتی خطرے میں پڑ جائے گی۔ افغانستان میں پراکسیز کے قیام اور کنٹرول نے بھارت اور ایران کو ایک دوسرے کے مزید قریب کر دیا۔
ہندوستان کی توانائی کی حفاظت کے ضرورت نے ایران کو، جو دنیا کے چوتھے بڑے تیل کے ذخائر اور دوسرے سب سے بڑے قدرتی گیس کے ذخائر کا مالک ہے، ایک انتہائی قیمتی شراکت دار بنا دیا ہے۔ چین کے بعد بھارت ایرانی خام تیل کا دوسرا بڑا خریدار ہے۔ تیل اور گیس کے علاوہ، ہندوستان نے کئی دوسرے منصوبوں میں بھی ایران کی مالی امداد کی ہے؛ 840 میگاواٹ کے تھرمل پاور پروجیکٹ کی تعمیر، شوگر انڈسٹری، فرٹیلائزر انڈسٹری، آبادان آئل ریفائنری اور سیمنٹ انڈسٹری۔
ایران کی چاہ بہار بندرگاہ کی ترقی اس کثیر الجہتی حکمت عملی کا نقطہ عروج ہے۔ ہندوستان اس بندرگاہ سے پاکستان کو بائی پاس کر کے افغانستان اور وسطی ایشیا تک رسائی حاصل کرنا چاہتا ہے- چاہ بہارجنوب مشرقی ایران کے سیستان میں واقع ہے -اور ممبئی اور موندرا کی مغربی ہندوستانی بندرگاہوں کے قریب واقع ہے۔ چاہ بہار وسطی ایشیا تک رسائی فراہم کرکے ہندوستان کے جغرافیائی سیاسی مفادات کو آگے بڑھانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔
. مزید برآں، یہ بندرگاہ بھارت کو اس قابل بنائے گی کہ وہ اپنے انجینئرز اور انٹیلی جنس اپریٹس کو استعمال کرکے نہ صرف گوادر بلکہ بلوچستان کے اندر اور پڑوسی ممالک تک کے علاقوں کی ایک وسیع علاقے میں surveillance کر سکتا ھے- چاہ بہار ، آبنائے ہرمز کا ایک قابل عمل متبادل بھی ہے۔ ایران کے ساتھ مل کر چاہ بہار کی ترقی اور مالی اعانت وسطی ایشیا کے ساتھ ہندوستان کے اقتصادی تعلقات کو تقویت دے گی۔ ہندوستان چابہار کو بین الاقوامی شمالی-جنوبی ٹرانسپورٹ کوریڈور سے جوڑ کر وسط ایشیا سے آگے روس اور یورپ تک پھیل سکتا ہے۔ ہندوستان نے ایرانی شہر زرنج کو افغان قصبے دلارام سے ملانے والی 135 میل لمبی سڑک کی تعمیر میں سرمایہ کاری کی ہے۔
اس بات کے شواہد موجود ہیں کہ چاہ بہار بندرگاہ "را "کے زیر استعمال ہے اس کو ایران کا تعاون بھی حاصل ھے ہے۔
ایران کی جانب سے منگل کو پاکستان کی حدود میں میزائل فائر نے پاکستان کو ایک ناقابلِ یقین پوزیشن میں ڈال دیا ہے کہ اسے اپنی تین سرحدوں پر بڑے سیکیورٹی چیلنجز کا سامنا ہے، جو کچھ پاکستان اور افغانستان، بھارت اور ایران کے درمیان واقع سرحدی علاقوں میں ہوتا ہے پاکستان کے لیے بڑا سیکورٹی چیلنج۔ بدھ کی صبح پاکستان کا ایران کو جواب دینا بالکل مناسب اور جائز ہے۔

‏#Nation_Stands With_Army

ایران #پاکستانی فضائیہ

You might also like