‏نئے مالی سال 2024-25 کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا‏یورپی سیّاح ، پیدل سفر کر کے شمالی علاقوں میں پہنچ گئےبند صندوقRegressive Mindsetبیوپار یا لاحاصل بحث : جان کر جیوذھانت، طاقت اور ریاستمارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ کیوں لگتی ہے؟بھارتی بزنس میں کی اھلیہ کے لئے پینے کا صاف پانی فرانس اورفجی کے قدرتی چشموں آئیس لینڈ کے گلیئشئر کو ملا کر تیار کیا جاتا ہے- سات سو پچاس ملی گرام پانی کی بوتل کی قیمت بھارتی روپے میں انچاس لاکھ روپے ھے-‎آئی سی سی ٹی20 ورلڈکپ میں بیس ٹیمیں حصہ لیں گی- افتتاحی تقریب آج نیویارک میں ہوگی – پاکستان اور بھارت کا میچ ۹ جون کو ہو گا-پہلا میچ آج امریکا اور کینیڈا کی ٹیموں کے درمیان کھیلا جائے گا-‏ملالہ یوسف زئی کی برطانوی ویب سیریزامریکی عدالت نے سابق صدر ٹرمپ کو مجرم قرار دے دیا- سزا گیارہ جولائی کو سنائی جائے گیعمران خان آفیشل ایکس ہینڈل سے شیخ مجیب الرحمان کی پروپیگنڈا ویڈیو اپ لوڈ کرنے پر ایف آئی اے سائبر وِنگ کا انکوائری کا فیصلہ, ذرائع۱۹۷۱ کی کہانی : ایک تحقیقی مکالہ‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںفوج‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںسینٹکام کے کمانڈر جنرل مائیکل ایرک کوریلا کا جی ایچ کیو کا دورہ، آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر سے ملاقات، باھمی دلچسپی کے امور بالخصوص علاقائی سلامتی کے معاملات میں تعاون پر تبادلہ خیالLeadership Dilemmaنیشنل ڈیفنس یونیورسٹی اسلام آباد میں پاک برطانیہ علاقائی استحکام کے موضوع پر چھٹی (6)کانفرنس منعقد ہوئیچین کے بڑے شہر اپنے ہی وزن سے دب رھے ہیںTransformation of Political Conflictوفاقی کابینہ نے نجی یونیورسٹیوں اور دیگر تمام اداروں کیلئے لفظ نیشنل استعمال کرنے پر پابندی عائد کردی

مشکل نہیں عقلمند فیصلے کرنے کی عادت ڈالیں

ہماری چیزوں کو غلط define کرنے کی عادت، دراصل مسائل کی جڑ ہے- کیا مصیبت پر قابو پانے کے لئے مشکل فیصلہ چاھیے یا عقلمند – مشکل فیصلہ کیا ہے؟ مشکل فیصلے کی ہمارے ہاں تعریف یہ ہے کہ عوام پر ٹیکس لگا دو- یہ تو کسی بھی حکومت کے لئے آسان ترین کام ہے- فرض کریں آپ جیپ پر پہاڑی علاقوں میں سفر کر رھے ہیں اور جیپ تیز پانی والے نالے کے اندر داخل ہوتے ہی لڑکھڑا گئی ہے – اور پانی میں پھنسنا شروع ہو گئی ہے- ہمارے کلیے کے مطابق اب مشکل فیصلہ کرنا پڑے گا- مشکل فیصلہ تو یہی ہے کہ جیپ کو ایکسیلیٹر دیں اور مزید آگے لے جائیں اور تمام مسافروں کی جان کو داؤ پر لگا دیں – عقلمند فیصلہ یہ ہے کہ ریورس لگایئں اور نالے سے باھر نکلیں اور کوئی ایسا راستہ ڈھونڈیں جہاں پانی کا بہاؤ کم ہو-
مشکل حالات، عقلمند فیصلے مانگتے ہیں نہ کہ مشکل فیصلے- متوازن فیصلوں کی عادت ڈالنی چاھیے- گیم تھیوری پڑھیں، کم از کم نقصان اور زیادہ سے زیادہ فائدے والے (عوامی مفاد ) کام کریں-
ارب پتی سے کھرب بننے کے لئے سہولت ضرور دیں لیکن ، غریب عوام کے لئے کچھ تو وصول کریں – کھرب پتی اور کچھ نہیں تو کم از کم اپنی فیکٹری کے ملازمیں کے لئے مفت، سبزی، تعلیم اور دوا دارو کا انتظام تو کر دے- ہسپتال نہیں تو ڈسپنسری بنا دے-آپ کسی مغربی ملک میں ایک پیسہ بھی ٹیکس نیٹ سے باھر نہیں لے جاسکتے کیونکہ نقد لین دین نہیں ہے اور قانون کی عملداری ہے- پاکستانی ایئر پورٹ پر اترتے ہی ٹیکس چوری کا بخار چڑھ جاتا ہے- اقتدار کو ضرور مضبوط کریں ، لیکن ملکی معیشیت کو بھی سہارا دیں- غیر یب سے ووٹ ضرور لیں، لیکن ان کے روزگار کا بھی بندوبست کریں- قرضوں پر بغیر سوچے گاڑیاں دیتے جا رھے ہیں- نہ پٹرول ہے، نہ سڑکوں پر گنجائش اور نہ قسطیں دینے والوں کی استطاعت- کمیونٹی ( metro) ٹرانسپورٹ کی سروس کو پروموٹ کریں تاکہ زند گی آسان ہو- ہسپتالوں میں دوائیاں نہ سہی کم ازکم ایم آر آئی کی سہولت تو دیں- بیکن ھاؤس اور روٹس سکول کی ہر برانچ میں بیس پچیس غریب کے بچوں کی سکالر شپ لازمی کریں-
بانٹ کر زندگی گزارنے کے کلچر کو پروموٹ کریں ، دنیا لالچ میں بہت آگے نکل چکی ہے- اور یہی کیپیٹلزم ہے- جمہوریت اور کیپیٹلزم ایکدوسرے کی ضد ہیں ، کم ازکم دیکھنے میں تو یہی لگ رھا ھے- ممکن ھے میری عقل پس پردہ فوائد سمجھنے سے قاصر ھو-
۰-۰-۰
ڈاکٹر عتیق الرحمان