ہمیں کچھ علم نہیں ھمارے ساتھ کیا ھو رھا ھے- اور یہی وجہ ھے کہ ہمارے ساتھ ہاتھ ہو رھا ھے-چین کے شہر سوزو میں ایک ایکسپریس وے کے پھسلن والے حصے پر درجنوں کاریں آپس میں ٹکرا گئیںسیاسی طوفان؛ کم ھو گا یا زیادہ؟کینیڈا میں کیلگری کے ایک طالب علم ھفتے میں دو بار وینکوور تعلیم حاصل کرنے کے لئے ھوائی جہاز سے سفر کرتے ہیںھون کی کرنا اے ؟مشرق وسطی کا بحرانکچھ سمجھ نہیں آئی ، یہ ھوا کیایمن کے حوثی باغیوں نے گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران بحیرہ احمر میں چار امریکی جنگی جہازوں کو نشانہ بنایا۹ فروری ۲۰۲۴خضدار پی پی آفس پر بم حملہپشین دھماکہہلاکتوں کی تعداد 17 ہو گئیالیکشن 2024، پرامن انعقاد کیلئے سیکورٹی اھلکار تعینیاتحکومت پاکستان الیکشن کے دن انٹرنیٹ بند نہیں کرے گی؛ پی ٹی اےنئ ریساں شہر لاھور دیاںآئی ایم ایف نے صنعتی شعبے پر سبسڈی کے بوجھ کو 91 فیصد تک کم کرنے کے لیے SIFC کی تجویز پر نظرثانی کرنے پر اتفاق کیا ہےمغربی ادب اور بھارتی سینمارواں مالی سال کے پہلے سات ماہ کے دوران پاکستان کا تجارتی خسارہ کم ہو کر 13.1 بلین ڈالر رہ گیاغزہ کی کہانی ؛ لاکھوں بچوں کی قربانیامریکہ نے شام پر حملہ کردیا- اس وقت ھوائی حملہ جاری ھے؛ ایرانی میڈیاالیکشن ۲۰۲۴ کیسا ھو گا؟بشری بی بی کو اڈیالہ جیل کی بجائے بنی گالہ میں ہی انکی رہائش گاہ کو سب جیل قرار دیکر شفٹ کر دیا گیا۔ وہ اپنے گھر میں ہی قیام کریں گی-

بھارتی حکومت کا فراڈ کا کاروبارعروج پر

راہل گاندھی نے فروری 2022 میں ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ مودی دور میں اب تک 5,35,000 کروڑ روپے کے بینک فراڈ ہوئے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ 75 سالوں میں ہندوستان کے لوگوں کے پیسوں کے ساتھ ایسا فراڈ کبھی نہیں ہوا، میڈیا نے رپورٹ کیا.عالمی میڈیا اڈانی گروپ کے حالیہ گھوٹالے سے بھرا ہوا ہے۔ 108 بلین ڈالر کے اڈانی گھوٹالے نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کا اعتماد متزلزل کر دیا ہے۔ یہ پہلا گھوٹالہ نہیں ہے جس نے مودی کے ساتھ ہندوستانی ارب پتی گٹھ جوڑ کو بے نقاب کیا۔ ایک ویب سائٹ سے پتہ چلتا ہے کہ گجرات حکومت نے اڈانی گروپ کو موندرا پورٹ اور ایس ای زیڈ کی ترقی کے لیے 14,305 ایکڑ زمین غیر معمولی قیمتوں پر الاٹ کی تھی۔ کچ میں زمین 1 روپے سے 32 روپے فی مربع میٹر کی قیمت پر الاٹ کی گئی تھی۔ 2018 میں، نیرو مودی، ایک لگژری ہیرے کے جوہری، پر 100 ارب روپے کے گھپلے کا الزام تھا۔ تاجر پر پنجاب نیشنل بینک سے دھوکہ دہی کے خطوط جاری کرنے کا الزام تھا۔ PNB، بھارت کے دوسرے سب سے بڑے سرکاری بینک نے 2018 میں الزام لگایا کہ چند بدمعاش ملازمین نے کئی سالوں میں جیولری گروپس کی مدد کرنے کے لیے جعلی بینک گارنٹی جاری کی ہیں – جو مودی اور ان کے چچا میہول چوکسی کے زیر کنٹرول ہیں – غیر ملکی کریڈٹ میں فنڈ اکٹھا کرتے ہیں۔ 2015 میں، بی جے پی حکومت نے سرکاری خزانے سے 14 کروڑ روپے صرف ان ویب سائٹس پر اشتہارات کے لیے خرچ کیے جو یا تو جعلی تھے یا غیر موجود تھے۔ ایسی 234 ویب سائٹس کی نشاندہی کی گئی۔ حکومت عوام کے پیسے کا غلط استعمال کر رہی ہے اور ساتھ ہی ساتھ حکمران جماعت کے نظریے کا پرچار کرنے والی جعلی ویب سائٹس کی حمایت کر کے آزادی صحافت پر حملہ کر رہی ہے۔ 2018 میں، ‘بجری’ کی قیمت، جو ایک عام تعمیراتی مواد ہے، راجستھان میں اس کے معمول سے پانچ گنا بڑھ گئی ہے۔ وجہ اس کی کان کنی پر سپریم کورٹ کی طرف سے لگائی گئی پابندی بتائی جاتی ہے۔ راجستھان پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر سچن پائلٹ نے الزام لگایا کہ قیمتوں میں اضافے کے پیچھے ایک بڑا گھوٹالہ ہے، جس میں غیر قانونی مارکیٹ کی ترقی شامل ہے۔ بھماشاہ سوستھیا بیمہ یوجنا کے تحت ہیلتھ انشورنس کے دعووں کی تعداد میں ایک غیر معمولی لیکن نمایاں اضافہ دیکھا گیا۔ بعد ازاں بنیادوں سے موصول ہونے والی رپورٹوں سے معلوم ہوا کہ کس طرح زیادہ تر دعوے دھوکہ دہی پر مبنی تھے۔ بیمہ کا دعویٰ غیر ضروری خدمات کے لیے کیا گیا تھا، اور بعض اوقات ایسی خدمات کے لیے جو کبھی فراہم نہیں کی گئیں۔ مریضوں کو بائیو میٹرک تصدیق کے بغیر داخل کیا گیا، جس سے اس طرح کے دھوکہ دہی کے دعوے آسانی سے کرنے میں مدد ملی۔ حکومت نے اس اسکینڈل پر اپنی خاموشی توڑنے سے انکار کردیا۔ بی جے پی حکومت کے تحت راجستھان میں حکومت اور اسپتالوں کے درمیان ناپاک گٹھ جوڑ پروان چڑھ رہا ہے۔

You might also like