‏نئے مالی سال 2024-25 کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا‏یورپی سیّاح ، پیدل سفر کر کے شمالی علاقوں میں پہنچ گئےبند صندوقRegressive Mindsetبیوپار یا لاحاصل بحث : جان کر جیوذھانت، طاقت اور ریاستمارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ کیوں لگتی ہے؟بھارتی بزنس میں کی اھلیہ کے لئے پینے کا صاف پانی فرانس اورفجی کے قدرتی چشموں آئیس لینڈ کے گلیئشئر کو ملا کر تیار کیا جاتا ہے- سات سو پچاس ملی گرام پانی کی بوتل کی قیمت بھارتی روپے میں انچاس لاکھ روپے ھے-‎آئی سی سی ٹی20 ورلڈکپ میں بیس ٹیمیں حصہ لیں گی- افتتاحی تقریب آج نیویارک میں ہوگی – پاکستان اور بھارت کا میچ ۹ جون کو ہو گا-پہلا میچ آج امریکا اور کینیڈا کی ٹیموں کے درمیان کھیلا جائے گا-‏ملالہ یوسف زئی کی برطانوی ویب سیریزامریکی عدالت نے سابق صدر ٹرمپ کو مجرم قرار دے دیا- سزا گیارہ جولائی کو سنائی جائے گیعمران خان آفیشل ایکس ہینڈل سے شیخ مجیب الرحمان کی پروپیگنڈا ویڈیو اپ لوڈ کرنے پر ایف آئی اے سائبر وِنگ کا انکوائری کا فیصلہ, ذرائع۱۹۷۱ کی کہانی : ایک تحقیقی مکالہ‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںفوج‏فوج کے ماتحت فلاحی اداروں کے ٹیکس اور اخراجات بارے میرے سوال پر ترجمان افواج پاکستان میجر جنرل احمد شریف نے پاک فوج اور اس کے فلاحی اداروں کی طرف سے ادا کیے جانے والے ٹیکسز کی تفصیلات بھی پیش کردیںسینٹکام کے کمانڈر جنرل مائیکل ایرک کوریلا کا جی ایچ کیو کا دورہ، آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر سے ملاقات، باھمی دلچسپی کے امور بالخصوص علاقائی سلامتی کے معاملات میں تعاون پر تبادلہ خیالLeadership Dilemmaنیشنل ڈیفنس یونیورسٹی اسلام آباد میں پاک برطانیہ علاقائی استحکام کے موضوع پر چھٹی (6)کانفرنس منعقد ہوئیچین کے بڑے شہر اپنے ہی وزن سے دب رھے ہیںTransformation of Political Conflictوفاقی کابینہ نے نجی یونیورسٹیوں اور دیگر تمام اداروں کیلئے لفظ نیشنل استعمال کرنے پر پابندی عائد کردی

‏پی ایم اے شروع شروع کے دنوں میں

‏پی ایم اے شروع شروع کے دنوں میں ایک میل دوڑ کے ٹیسٹ کے علاوہ جو کام ہمیں ذرا دل کو نہیں بھاتا تھا وہ پبلک سپیکنگ تھی- ہماری سمجھ سے بالا تھا کہ ہمارے خیالات اور وہ بھی انگلش میں پی ایم اے کے لئے اتنے اہم کیوں ہیں – بہر حال ہم اس کو کار خیر سمجھ کر انجام دیتے رھے کہ ممکن ہے ہمارے خیالات کسی ملکی پالیسی کا حصہ بن رھے ھوں –
‏آپ اپنی تخیل پرواز کو ذرا استعمال کریں اور سوچیں کہ کسی دور دراز گاؤں کا انیس بیس سالا دیہاتی نوجوان انگلش کے ساتھ کیا کھلواڑ کرتا ھوگا -خیر نتائج کی ذمہ داری ان کے ست تھی جو ہمیں روسٹرم پر کھڑا کرتے تھے-
‏پی ایم اے کے شب و روز بھی کیا مزیدار زندگی تھی- سپر فٹ اور بے غم – کچھ بھی ہو جائے ، بولنی انگلش ہی ھوتی ھے-انگلش پشتو لہجے سے مشکل سے بچ کر نکلتی ہے تو پنجابی اسے گھیر لیتی ہے، پھر سندھی، بلوچی – انگلش کو کچھ سمجھ نہیں آتی کہ کدھر پھنس گئی ھے- کچھ انگریزی سکولوں والے بھی ہوتے ہیں جو بہت احترام سے انگلش سے پیش آتے ہیں اور یہی وجہ ھے انگلش ٹکی ھوئی ھے-
‏دوران تربیت پی ایم اے کے رھائشی بلاکس میں کلاسز ختم ہونے کے بعد ایک عجیب اور دلکش سماں ہوتاہے- سب سے سینئرز کورس تو سپر پاور کی طرح ہے، جس کا ایک ہی کام ہی صرف دوسروں کو تنگ کرنا ہے – تیسر ی ٹرم والے سپر پاور سے نیچے والی ریاستوں کی طرح ہیں- احتیاط برتتے ہوئے بس چلتے ریں- دوسری ٹرم والے ،تیسر ی دنیا کے خوشحال ملک کی طرح ہیں ، بس گزارہ کرتے ہیں – اور جونیئر ترین کورس، افریقہ کا کوئی جنگ زدہ ملک جہاں صبح شام افراتفری ہی رھتی ہے-
‏سینئرز کورسز میں کچھ لائق کیڈٹس کو جونیئر کیڈٹس کے نظم و ضبظ کی ذمہ داری سونپ دی جاتی ہے- کلاسز ختم ھونے کے بعد وہ متعلقہ سینئر ، اپنی اپنی جونیئر پلاٹون کی ، حسب حال انگلش میں مرمت کرتے ہوئے نظر آتے ہیں-
‏آپ کسی افریقی ملک کی سفاری کا تصور ذہن میں لے آئیں – کہیں بارہ چودہ ہرن ادھر سے ادھر بھاگ رھے ہیں- کہیں اکیلا زرافہ درخت سے پتے اتار کر کھا رھا ھے- کہیں دو ھاتھی ٹہل رھے ہیں – کہیں خرگوش چھپ چھپ کو منزل کی طرف بڑھ رھے ہیں – کہیں چیتا اپنے شکار کی تلاش میں گھات لگائے بیٹھا ہے- یہ جو چیتا ہے یہ وہی سینئر کیڈٹ ہے جسے ، بٹالین سارجنٹ میجر( بی ایس ایم) ، کمپنی سارجنٹ میجر ( سی ایس ایم) اور سارجنٹ کے نام سے پہچانا جاتا ھے- ان تینوں طرح کے سارجنٹ کے چہرے پر مسکراہٹ نام کی کوئی چیز نہیں ہوتی- کھا جانے والی نظروں سے جونیئر کو دیکھتے ہیں – ان کی ذمہ داریوں میں سب سے اہم کام ، جونیئر کے لئے خواہ مخواہ روڑے اٹکانا اور انہیں کچھ نہ کچھ سکھاتے رہنا ہے-جیسا کہ پنٹ شرٹ اور ٹائی کے ساتھ شاور کیسے لیتے ہیں- فراگ جمپ سے گراؤنڈ فلور سے چوتھی منزل تک کیسے پہنچنا ہے- اگر کوئی زیر تعمیر بلاک کے قریب پانی کا تالاب ہے تو تیراکی کی مشق کیسے کرنی ہے-
‏پی ایم اے میں آپ کسی بھی جگہ ہوں آپ نے اپنے ڈریس پر ہر وقت دھیان رکھنا ھوتا ھے- سونے سمیت ، ہر لمحے کا ڈریس کوڈ ھے- پی ٹی کٹ، نارمل یونیفارم ، کمبٹ یونیفارم، پنٹ شرٹ ، ٹائی، پنٹ کوٹ، کمروں میں شلوار قمیص کے اوپر گاؤن- میس کٹ، میس میں داخل ہونے کے آداب، کھانا کھانے، اٹھنے بیٹھنے، سڑک پر چلنے، کلاس روم میں بیٹھنے، کتابوں والا بیگ اٹھانے کا طریقہ، جوتوں کے تسمے کیسے باندھنے ہیں، کہاں آپ پیدل چل سکتے ہیں ، کہاں دوڑنا ھے، ہر چیز کی ۲۴/۷ پابندی کرنی ھوتی ھے- اور اس پابندی پر عمل درآمد کے لئے دن کو سٹاف اور کلاسز کے بعد سینئرز ذمہ دار ہوتے ہیں- سینئر رات کو ایک بجے اگر برفباری بھی ہو رھی ھو تو سوٹڈ بوٹڈ نظر آئے گا- اور مائنس ٹمپریچر میں فرنٹ رول کرتے کیڈیٹس باقاعدہ ٹائیاں لگا کے سینئرز کے حکم کی تابعداری کر رھے ھونگے-
‏کیا مزیدار نظارہ ھوتا تھا، یاد کر کے ایک دفع تو جھرجھری سی آ جاتی ھے-
‏کھانا کھاتے ہوئے کانٹا کس ھاتھ میں ہو گا، ڈائنگ ٹیبل پر اٹھ کر کچھ نہیں پکڑنا، بیٹھے بیٹھے کسی دوسرے کوآرام سے بولیں ، وہ مطلونہ چیز پاس کرے گا، کرسی پر بیٹھنا کس طرف سے، اٹھتے ہوئے کرسی کی آواز نہ آئے- ہر دفع میس کے اندر داخل ھوتے وقت دیوار پر چسپاں قائد اعظم محمد علی جناح کی تصویر کر تعظیم لازمی ھے- جو ویٹر کھانا کھلاتے ہیں ان کا احترام- گالم گلوچ تو دور کی بات کسی کے ساتھ بھی بدتمیزی کی اجازت نہیں-
‏پی ایم اے میں گزرہ ہوا وقت بہت یاد آتا ھے- کیا خوبصورت دن تھے – بہت سے دوسرے غیر متوقع امتحانوں کے ساتھ انگلش کا پُل سراط بہرحال عبور کرنا پڑتا ھے –
‏۰-۰-۰-
‏برگیڈیئر عتیق الرحمان (ر)